غزل

رات دن جوش و جنون سے کام ہونا چاہئیے

اس دنیا میں اپنا بھی اک نام ہونا چاہئے

مٹ نہ جائے اس جہاں سے کہیں ہمت کا نام

ان قوس و قزاح کی طرح اپنا بھی مقام ہونا چاہئے

چھوڑو بارشوں کے بعد یوں جل تھل کی باتیں

بعد از رنگوں کی طرح اپنا بھی نام ہونا چاہئے

کندن سونا بنتا ہے جو جل جائے اپنی بھٹی میں

بلکل اسی طرح اپنا بھی رنگ کمال ہونا چاہئے

ہے نشیب و فراز کا ہی نام یہ زندگی

ہمیں رنگوں کی طرح یک جان ہونا چاہئے

جب بکھرے آسمان پر قوس و قزاح کی طرح منال

اس دن صرف جزبے کا ہی نام ہونا چاہئے

Published by manal rajpout

Manal Rajpout work as a Freelance, Blogger or a Teacher

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Create your website with WordPress.com
Get started
%d bloggers like this: